بسم الله الرحمن الرحيم

Thursday, 16 March 2017

Bharrah Khatra

بڑا خطرہ...

---------------------------------------------------
’ہم وباؤں سے ڈرتے ہیں، امراض سے گھبراتے ہیں، بلاؤں کی دہشت ہمارے دلوں میں سمائی ہوئی ہے، اور اس کے لیے ہر طرح کی احتیاطی تدبیریں عمل میں لاتے ہیں، یہاں تک کہ اگر کوئی کہہ دے کہ یہاں کالرا کا ایک کیس ہوگیا ہے تو پورے شہر میں دہشت پھیل جاتی ہے، ہر شخص پر خوف مسلط ہوجاتا ہے، اور یہ سمجھنے لگتا ہے کہ اس وبا کا سب سے پہلا شکار وہی ہوگا،
لیکن اخلاقی امراض، یہ غلط اخلاق و عادات، جن کو اللہ اور رسول ناپسند کرتے ہیں، یہ مادہ پرستی، شہوت پرستی، ہر جگہ قوت کے سامنے سرنگوں ہوجانا، خواہشات کی بے قید اطاعت، جذبات کی رو میں بہہ جانا، لہو و لعب میں انہماک، رقص و سرود، ذہنی تسکین اور آرام طلبی و عیش کوشی کے دیگر وسائل میں حد سے بڑھی ہوئی دلچسپی، قیادتوں اور نعروں کی اندھی تقلید، حقائق سے چشم پوشی، بار بار کے تجربات سے عبرت نہ حاصل کرنا، امیدوں اور آرزؤوں کی بے لگامی، انسانوں کا حد سے بڑھا ہوا احترام، سیاسی اور غیر سیاسی لیڈروں اور رہنماؤں کی تقدیس اور ان کے بارے میں غلط فہمیوں اور لغزشوں سے معصومیت کا اعتقاد، یہ امراض ہمارے انجام اور ہمارے معاشرہ کے لیے ہزاروں دشمنوں اور دشمن کے ہزاروں لشکروں سے کہیں زیادہ خطرناک، کہیں زیادہ مہلک اور کہیں زیادہ تشویشناک ہیں۔‘‘
(عالم عربی کا المیہ،ص: ۱۱۵)
مفکر اسلام حضرت مولانا سید ابو الحسن علی ندویؒ

Post a Comment