بسم الله الرحمن الرحيم

Wednesday, 12 April 2017

Maujuda Daur ka Qabil e Afsoos aur Laiyq Tabdeel Rawaiya Kia hai ? Article Urdu Mai

موجودہ دور کا قابل افسوس اور لائق تبدیل رویہ جو حد درجہ رائج ہوگیا ہے         

وہ یہ ہے جس نے مجھے تحفہ دیا میں اسے دوں گا، جس نے مجھے فون کرکے خیریت معلوم کی، میں بھی اسے فون کروں گا، جو میری دعوت پر آئے گا، میں اس کی دعوت پر جاؤں گا، یہاں تک وفات جیسے موقع پر بھی ہمارا رویہ ہے کہ جو میرے عزیز کی تعزیت کرنے آیا ، میں بھی اس کے عزیز کی تعزیت کرنے جاؤں گا، لوگوں کے ساتھ جذبات پر مبنی رویہ نہ رکھیں، نہ انہیں تحفوں پر تولیں، نہ ہی نفع ونقصان جیسے مادی چیزوں سے ناپیں، لوگوں کے لئے جود کرم اور 

اعلی اخلاق کا معاملہ رکھیں، بمطابق احادیث
جو تم سے کاٹے تم اس سے جوڑو، جس نے تم سے روکا، تم اسے دو، جس نے غلطی کی، اسے معاف کردو، اگر تم سے غلطی ہوئی تو بلا جھجھک معافی مانگو،تمیں اس دنیا میں صرف ایک مرتبہ زندگی ملی ہے، اسے اس طرح گزارو کہ جب تمہیں کوئی دیکھے، تو تمہارے جیسا بننے کی خواہش کرے، جو تمہارے بارے میں سنے ، اسے تم سے ملنے کا اشتیاق ہو،

کیا تمہیں نہیں معلوم کہ اعلی اخلاق در اصل ایک عطر Perfume ہےجس کی خوشبو ہمیشہ باقی رہتی ہے۔  

Post a Comment