بسم الله الرحمن الرحيم

Monday, 15 May 2017

The Example of Hazrat Moosa(A.S) and Hazrat Ibrahim(A.S) | In |Urdu


 حضرت ابراہیم علیہ السلام کی مثال، حضرت موسی علیہ السلام کی مثال


حضرت موسی علیہ السلام کی مثال

"تاریخ الرسل والملوک"میں درج ہےکہ حضرت موسی علیہ السلام جب مسلسل سات دن اور راتیں سفر کرنے کے بعد مدین پہنچے تو سخت تھکاوٹ اور بھوک کی حالت میں یوں دعا کی: (رب انى لما انزلت الى من خير فقير)( القصص:٢٤) " میرے پروردگار! جو کوئی بہتری تو اوپر سے نازل کردے،میں اس کا محتاج ہوں" حضرت موسی علیہ السلام اپنی دعا اللهم اطعمنى (اے اللہ! مجھے کھانا کھلا)کی صورت میں پیش کرتے تو بھی گنجائش تھی،
مگر آپ نے ایسے الفاظ سے دعا مانگی جو ادب بارگاہ الہی کی بہترین مثال ہے۔

حضرت ابراہیم علیہ السلام کی مثال،حضرت موسی علیہ السلام کی مثال

حضرت ابراہیم علیہ السلام کی مثال

 حضرت ابراہیم علیہ السلام نے اپنی بت پرست قوم کو توحید کا درس دیا اور اپنے پروردگار کا تعارف ان الفاظ سے کروایا : الذى خلقنى فهو يهدين○والذى هو يطعمنى يسقين ○واذا مرضت فهو يشفين○(الشعراء ٧٨-٧٩_٨٠) , , جس نے مجھے پیدا کیا ہے اور پھر وہ ہی میری رہنمائی فرماتا ہے اور جو مجھے کھلاتا پلاتا ہے اور جب میں بیمار ہوتا تو مجھے شفا دیتا ہے، ، سبحان اللہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔!
اس کلام میں کتنی طاقت ہے کہ (پیدا کرنا، ہدایت دینا، کھلانا، پلانا اور شفا دینا )کو اللہ تعالٰی کی جانب سے قرار دیا اور بیماری کو اپنی طرف منسوب کیا ۔گو کی بیماری بھی اللہ تعالٰی ہی کی طرف سے آتی ہے بادئ النظر میں بیماری کو عیب سمجھا جاتا ہے، لہٰذا بیماری کا اللہ تعالٰی کی طرف منسوب کرنا ادب کے خلاف تھا ۔لہذا یوں کہا" جب میں بیمار ہوتا ہوں تو وہی مجھے شفا دیتا ہے" بلا شبہ یہ کلام الٰہی کی بہترین مثال ہے۔
                                written by:  Maulana Syed Javid Ullah

Post a Comment